ماسک نہ پہننے پر جرمانہ: ماسک کی جگہ عربی رومال استعمال کیا جاسکتا ہے

امریکی سیاہ فام کا قاتل کہاں ہے؟
June 1, 2020
بالی وڈ کے میوزک کمپوزر واجد خان انتقال کرگئے
June 1, 2020

ماسک نہ پہننے پر جرمانہ: ماسک کی جگہ عربی رومال استعمال کیا جاسکتا ہے

ریاض: سعودی وزرات صحت نے ماسک نہ پہننے پر جرمانے کے حوالے سے کہا ہے کہ اگر طبی ماسک دستیاب نہ ہو تو عربی رومال شماغ یا خواتین کا نقاب بھی اس کا متبادل ہو سکتا ہے۔

سعودی ویب سائٹ کے مطابق سعودی وزارت صحت کی جانب سے کہا گیا ہے کہ عربی رومال شماغ کو منہ پر لپیٹنا طبی ماسک کا نعم البدل ہے، اگر طبی ماسک نہیں تو شماغ یا خواتین کا نقاب بھی اس کا متبادل ہو سکتا ہے۔

وزارت صحت کے ٹویٹر پر جاری بیان کے حوالے سے کہا ہے کہ اگر رومال یا خواتین کا نقاب اس طرح لیا گیا ہو کہ منہ اور ناک مکمل اور مضبوطی سے ڈھکی گئی ہو تو ان پر ماسک کی خلاف ورزی درج نہیں کی جائے گی۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ رومال یا خواتین کا نقاب طبی ماسک کا متبادل اسی صورت میں ہوسکتا ہے جب وہ ایک سے زائد تہوں پرمشتمل ہو اور منہ اور ناک مکمل طور پر ڈھکی ہوئی ہوں۔

واضح رہے کہ وزارت داخلہ کی جانب سے کرونا وائرس سے بچاؤ کے لیے طبی یا کپڑے والے ماسک کا استعمال لازمی قرار دیا ہے، گھر سے باہر ماسک استعمال نہ کرنے والوں کو 1 ہزار ریال جرمانے کا سامنا کرنا پڑے گا۔

اس حوالے سے وزارت صحت کے ٹیلی فونک معلوماتی سینٹر 937 پر اس امر کی وضاحت کرتے ہوئے کہا گیا کہ شماغ یا نقاب ماسک کا متبادل ہوسکتے ہیں اگر وہ مقررہ شرائط کے مطابق ہوں۔

یاد رہے کہ عرب ممالک میں سر پر 2 طرح کے رومال رکھے جاتے ہیں، ایک سفید باریک کپڑے کا ہوتا ہے جسے غطرہ کہا جاتا ہے جبکہ دوسرا سرخ اور سفید ہوتا ہے اس شماغ کہتے ہیں۔

شماغ نسبتاً موٹا ہوتا ہے، اسے عام طور پر رات کو یا سرد موسم میں استعمال کیا جاتا ہے۔ سردیوں میں شماغ سے منہ کو بھی ڈھانپ لیا جاتا ہے جو سرد ہوا سے بچنے میں معاون ثابت ہوتا ہے۔